Day: November 17, 2020

Science

3 پاکستانی بھی، دنیا کے 2 فیصد ممتاز سائنسدانوں کی فہرست میں شامل

امریکا کی معتبر اسٹینفورڈ یونیورسٹی نے حال ہی میں دنیا کے 2 فیصد ممتاز سائنسدانوں کی فہرست جاری کی گئی۔ 1 لاکھ 59 ہزار 683 افراد کی اس فہرست میں 3 پاکستانی سائنسدان بھی شامل ہیں جو پنجاب یونیورسٹی سے تعلق رکھتے ہیں۔ اس فہرست میں شامل پاکستانی محققین نے پنجاب یونیورسٹی کے فیکلٹی آف منیجمنٹ سائنسز کے ڈین ڈاکٹر خالد محمود، فیکلٹی آف سائن کے ڈین ڈاکٹر محمد شریف اور ریاضی ڈیپارٹمنٹ کے ڈاکٹر محمد اکرم شامل ہیں۔ اس فہرست میں سائنس کے ہر شعبے کے سب سے زیادہ حوالہ دیئے جانے والے سائنسدانوں کو شامل کیا گیا اور اس کے لیے جرائد کے ڈیٹا کو مرتب کرنے والے ڈیٹابیس اسکوپس کے اعدادوشمار کی مدد لی گئی۔‎ اس فہرست میں شامل کیے جانے والے 2 فیصد سائنسدانوں کا تعین حوالہ دیئے جانے کی بنیاد پر کیا گیا، جس میں حوالہ جات کے اعدادوشمار، ایچ انڈیکس اور دیگر شامل ہیں۔ اس تحقیق کے نتائج جریدے پلو...
Health

ایف۔پی۔ایس۔سی کے بھی 10ملازمین کا کورونا ٹیسٹ مثبت آگیا

فیڈرل پبلک سروس کمیشن کے 10 ملازمین کورونا وائرس میں مبتلا ہو گئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق ملازمین نے خود کو قرنطینہ کر لیا ہے جب کہ متاثرہ افراد سے رابطہ میں رہنے والے افراد کوبھی قرنطینہ میں رہنے کی ہدایت کی گئی ہے۔ خیال رہے کہ وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں کورونا وائرس کے مثبت کیسز کی شرح 11.7 فیصد ہو گئی ہے۔ ضلعی انتظامیہ کے مطابق گزشتہ روز اسلام آباد میں1917 ٹیسٹ گئے جن میں سے226 مثبت آئے اور کورونا کیسز کی مجموعی تعداد24 ہزار444 ہوگئی ہے۔ اسلام آباد میں کورونا کےایکٹیو کیسز کی تعداد3 ہزار686 ہے اور260 افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں۔20 ہزار 498 کورونا کے مریض صحتیاب بھی ہوئے ہیں۔ اس وقت پاکستان میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 3 لاکھ 61 ہزار 82 ہے اور اموات 7ہزار193 تک پہنچ چکی ہے۔ ملک کے15 بڑے شہروں میں کورونا مثبت کیسزکی شرح بہت زیادہ ہے۔ سندھ کے...
Health

استعمال شدہ ماسک کی ڈوریاں جانوروں کی تکلیف اور ہلاکت کا سبب بننے لگیں

تحفظ ماحول کے عالمی اداروں نے کہا ہے کہ ہمارے روزمرہ کے استعمال کے بعد پھینکے جانے والے ماسک زمین میں گلنے کے لیے 450 سال کا عرصہ لے سکتے ہیں، علاوہ ازیں ماسک کی ڈوریاں جانوروں کی تکلیف اور ہلاکت کا سبب بھی بن رہی ہیں۔ کورونا وائرس کی وبا کے باعث دنیا بھر میں ہر مہینے 19 کروڑ 40 لاکھ ڈسپوزیبل ماسک استعمال کیے جا رہے ہیں۔ تحقیق کے مطابق سنگل یوز (ایک دفعہ استعمال کیا جانے والا) ماسک پولی پروپلین اور وینل ون جیسی پلاسٹک سے بنا ہوتا ہے جسے تحلیل ہونے کے لیے 450 سال کا عرصہ درکار ہے۔ اس وقت کے دوران فیس ماسک مائیکرو پلاسٹکس میں تبدیل ہو جاتے ہیں اور سمندری حیات انہیں نگل لیتی ہے۔ میرین کنزرویٹو چیریٹی کا کہنا ہے کہ استعمال شدہ فیس ماسکس اور پلاسٹک ایک تباہ کن دھماکے کی صورت میں ساحل سمندر اور دریاؤں میں پھیل رہے ہیں۔ ماہرین کے مطابق جب سے لاک ڈاؤن کا آغاز ہوا ہے تب سے پ...
Health

کورونا خاتمہ کب تک ہوگا؟ جانیئے ماہرین کی پیشگوئی

دنیا بھر میں لوگ کورونا وائرس کی وبا کا مققابلہ کررہے ہیں اور اب تک ساڑھے 5 کروڑ کے قریب افراد میں کووڈ 19 کی تشخیص ہوچکی ہے۔ مگر حالیہ ہفتوں میں اس بیماری کی روک تھام کرنے والی ویکسینز کے حوالے سے کافی مثبت خبریں سامنے آئی ہیں۔ فائزر اور بائیو این ٹیک، روس اور موڈرینا کی ویکسینز کے انسانی ٹرائل کے تیسرے مرحلے کے ابتدائی جاری ہوئے، جن میں وہ بیماری سے بچانے کے لیے 90 فیصد سے زیادہ موثر ثابت ہوئیں۔‎ مگر کیا یہ پیشرفت کورونا وائرس کی روک تھام کرسکے گی اور کب تک زندگی معمول پر آسکے گی؟ اس بارے میں ماہرین کی آرا جان لیں، جن کا تخمینہ ایک دوسرے سے مختلف ہے مگر وہ سب اگلے سال میں حالات بہتر ہونے کے لیے پرامید ہیں۔ ماہرین کے تخمینے کے مطابق اس وبا کو روکنا اسی وقت ممکن ہوسکے گا جب 70 فیصد آبادی میں اس وائرس کے خلاف مدافعت پیدا ہوجائے۔ مگر یہ واضح نہیں کہ اتنے بڑے پیمانے پر ...