روس کی ویکسین وائرس کے خلاف موثر قرار؟ مریضوں میں مدافعتی قوت اور اینٹی باڈیز میں اضافہ اور معمولی سائیڈ ایفیکٹس بھی نمایاں


روس میں بنائی گئی کورونا وائرس کی ویکسین کے ابتدائی مرحلے کے نتائج مثبت رہے۔

میڈیکل جرنل لینسٹ میں شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق ‘اسپوتنک فائیو’ نامی روسی ویکسین کے پہلے اور دوسرے آزمائشی مرحلے میں شامل 76 افراد میں اینٹی باڈیز بنیں۔

تحقیق کے مطابق 50 فیصد کو بخار، 42 فیصد کو سر درد، 28 فیصد کو کمزوری جبکہ 24 فیصد کو جوڑوں کے درد کی شکایت ہوئی۔

روسی حکام کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کے لیے تیار کی گئی ویکسین سے مریضوں میں مدافعتی قوت اور اینٹی باڈیز پیدا ہوئیں اور معمولی سائیڈ ایفیکٹس دیکھے گئے۔

ماہرین کے مطابق روس کی ویکسین کو وائرس کے خلاف موثر قرار دینے کا فیصلہ تیسرے مرحلے میں اس کی بڑے پیمانے پر آزمائش کے بعد ہی کیا جاسکے گا۔

روسی حکام کا کہنا ہے کہ ویکسین کو تیسرے مرحلے میں 40 ہزار رضا کاروں پر آزمایا جائے گا۔

خیال رہے کہ روس نے تیسرے مرحلے کی آزمائش مکمل ہونے سے پہلے ہی عوام کے استعمال کے لیے دنیا کی پہلی منظور شدہ کورونا ویکسین بنانے کا دعویٰ کیا تھا جس پر اسے شدید تنقید کا بھی سامنا کرنا پڑا تھا۔؎؎




Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *